We have detected Lahore as your city

اومیکرون ویرینٹ کی علامات اور اس سے بچنے کی احتیاطی تدابیر اور طریقے

Dr. Hira Tanveer

5 min read

Find & Book the best "General Physicians" near you

دنیا بھر کے لوگ کووڈ- 19 کی اومیکرون ویرینٹ کے بارے میں فکر مند ہیں۔ ہم نے اس نئی قسم کے بارے میں ماہرین کی تازہ ترین معلومات اکٹھی کی ہیں۔ اس آرتٰکل میں اومیکرون وائرس کے بارے میں وہ تمام معلومات جو آپ کو جاننے کی ضرورت ہے، موجود ہے۔

اومیکرون ویرینٹ کیا ہے؟

کووڈ- 19 کے اومیکرون ویرینٹ کو عالمی ادارہ صحت نے اس شواہد کی بنیاد پر تشویش کا ایک قسم کہا ہے کہ اس میں متعدد میوٹیشنز ہیں جن کا اثر اس کے برتاؤ پر پڑ سکتا ہے۔ اومیکرون کے بارے میں ابھی بھی کافی غیر یقینی صورتحال ہے اور اس کی منتقلی، شدت اور دوبارہ انفیکشن کے خطرے کا جائزہ لینے کے لیے کافی تحقیق جاری ہے۔

اومیکرون ویرینٹ کیسے پیدا ہوا؟

جب کوئی وائرس بڑے پیمانے پر گردش کر رہا ہو اور متعدد انفیکشنز کا باعث بن رہا ہو، تو وائرس کے تبدیل ہونے کا امکان بڑھ جاتا ہے۔ وائرس کو پھیلانے کے جتنے زیادہ مواقع ہوں گے، اس میں تبدیلیوں کے اتنے ہی زیادہ مواقع ہوں گے۔

 اومیکرون جیسی نئی قسمیں ایک یاد دہانی ہیں کہ کووڈ- 19 وبائی مرض ابھی ختم نہیں ہوا ہے۔ اس لیے یہ ضروری ہے کہ جب لوگ ان کے پاس دستیاب ہوں تو وہ ویکسین حاصل کریں اور وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے موجودہ مشورے پر عمل کرتے رہیں، بشمول جسمانی دوری، ماسک پہننا، باقاعدگی سے ہاتھ دھونا اور گھر کے اندر کی جگہوں کو اچھی طرح سے ہوادار رکھنا۔

یہ بھی اہم ہے کہ ویکسین اور صحت عامہ کے دیگر اقدامات کہ ہر جگہ قابل رسائی ہوں۔

اومیکرون ویرینٹ کہاں موجود ہے؟

اومیکرون کی قسم اب دنیا کے بہت سے ممالک میں پائی گئی ہے۔ ڈبلیو ایچ او نے رپورٹ کیا ہے کہ اومیکرون شاید زیادہ تر ممالک میں ہے، چاہے ان جگہوں پر  اس کا ابھی تک پتہ نہیں چلا ہے۔

 کیا اومیکرون مختلف قسم کی دیگر کووڈ- 19 کے ویرینٹس سے زیادا شدید ہے؟

ابتدائی نتائج سے پتہ چلتا ہے کہ اومیکرون ڈیلٹا ویرینٹ سے کم شدید ہوسکتا ہے، لیکن مزید ڈیٹا کی ضرورت ہے اور ڈبلیو ایچ او نے خبردار کیا ہے کہ اسے “ہلکے” کے طور پر مسترد نہیں کیا جانا چاہیے۔ مطالعہ جاری ہیں اور یہ معلومات دستیاب ہوتے ہی اپ ڈیٹ کی جائیں گی۔

یہ یاد رکھنا ضروری ہے کہ کووڈ- 19 کی تمام قسمیں شدید بیماری یا موت کا سبب بن سکتی ہیں، بشمول ڈیلٹا ویرینٹ جو اب بھی پوری دنیا میں غالب ہے، یہی وجہ ہے کہ وائرس کے پھیلاؤ کو روکنا اور آپ کے وائرس سے متاثر ہونے کے خطرے کو کم کرنا بہت ضروری ہے۔ .

کیا اومیکرون ویرینٹ باقی ویرینٹس سے زیادہ متعدی ہے؟

اومیکرون دیگر اقسام کے مقابلے زیادہ تیزی سے پھیل رہا ہے۔ دستیاب معلومات کی بنیاد پر، ڈبلیو ایچ او کا خیال ہے کہ امکان ہے کہ اومیکران ڈیلٹا ویرینٹ کو پیچھے چھوڑ دے گا جہاں کمیونٹی میں کووڈ- 19 کی منتقلی ہے۔

تاہم، ویکسین لگوانا اور احتیاطی تدابیر اختیار کرنا جیسے پرہجوم جگہوں سے گریز کرنا، دوسروں سے اپنا فاصلہ رکھنا اور ماسک پہننا کووڈ- 19 کے پھیلاؤ کو روکنے میں مدد کرنے میں اہم ہیں، اور ہم جانتے ہیں کہ یہ اقدامات دیگر اقسام کے خلاف موثر رہے ہیں۔

کیا اومیکرون جسم میں مختلف علامات کا سبب بنتا ہے؟

نئے کووڈ- 19 ویرینٹ “اومیکرون” کی علامات ذیل میں دی گئی ہیں۔ ان علامات کو عام علامات، کم عام علامات اور سنگین علامات میں درجہ بندی کیا گیا ہے

۔1 سب سے عام علامات

نئے کووڈ- 19 ویرینٹ “اومیکرون” کی سب سے عام علامات بخار، کھانسی، تھکاوٹ، ذائقہ یا بو کا کھو جانا ہیں۔

۔2 ایسی علامات جو اتنی عام نہیں ہیں

نئے کووڈ- 19 ویرینٹ “اومیکرون”  کی غیر معمولی علامات میں خراش، سر درد، جسم میں درد، اسہال، جلد پر دانے، انگلیوں یا انگلیوں کا رنگ بے رنگ ہونا ہیں۔ سرخ یا جلن والی آنکھیں بھی ظاہر ہو سکتی ہیں۔

۔3 سنگین علامات

نئے کووڈ- 19 ویرینٹ “اومیکرون”  کی سنگین علامات سانس لینے میں دشواری یا سانس کا پھنسنا، بولنے یا نقل و حرکت میں کمی، یا الجھن یا سینے میں درد ہیں۔

نوٹ: اگر کسی میں ان علامات میں سے کوئی بھی ہے تو اسے فوری طور پر کووڈ ٹیسٹ کروانا چاہئیے۔

کیا کووڈ- 19 کی ویکسین اومیکرون کے ویرینٹ کے خلاف موثر ہیں؟

محققین اومیکرون ویرینٹ کے کووڈ- 19 ویکسینز کی تاثیر پر پڑنے والے کسی بھی ممکنہ اثرات کو دیکھ رہے ہیں۔ معلومات ابھی تک محدود ہیں، لیکن شدید بیماری اور موت کے خلاف ویکسین کی تاثیر میں تھوڑی کمی اور ہلکی بیماری اور انفیکشن کی روک تھام میں کمی ہو سکتی ہے۔ تاہم، ڈبلیو ایچ او کی رپورٹ ہے کہ اب تک ایسا لگتا ہے کہ فی الحال دستیاب ویکسین سنگین بیماری اور موت کے خلاف اہم تحفظ فراہم کرتی ہیں۔

یہ بھی ضروری ہے کہ دوسرے بڑے پیمانے پر گردش کرنے والی مختلف اقسام جیسے ڈیلٹا ون سے حفاظت کے لیے ویکسین لگائی جائے۔ جب آپ کی باری ہو تو یقینی بنائیں کہ آپ کو ویکسین لگوانا چاہیے۔ اگر آپ کی ویکسینیشن میں دو خوراکیں شامل ہیں، تو زیادہ سے زیادہ تحفظ حاصل کرنے کے لیے دونوں کو حاصل کرنا ضروری ہے۔

کیا پہلے کا کووڈ- 19 انفیکشن اومیکرون ویرینٹ کے خلاف موثر ہے؟

ڈبلیو ایچ او نے رپورٹ کیا ہے کہ ابتدائی شواہد سے پتہ چلتا ہے کہ پچھلا انفیکشن اومیکرون کے خلاف تشویش کی دیگر اقسام، جیسے ڈیلٹا کے مقابلے میں کم تحفظ فراہم کر سکتا ہے۔ اگرچہ معلومات ابھی تک محدود ہیں اور ہم اپ ڈیٹس کے دستیاب ہوتے ہی شیئر کر دی جائیں گی۔

اگر آپ کو پہلے کووڈ- 19 ہو چکا ہو تب بھی آپ کو ویکسین لگوانی چاہیے۔ اگرچہ کووڈ- 19 سے صحت یاب ہونے والے لوگ وائرس کے خلاف کچھ قدرتی قوت مدافعت پیدا کر سکتے ہیں، لیکن ہم ابھی تک نہیں جانتے کہ یہ کتنی دیر تک رہتا ہے یا آپ کتنی اچھی طرح سے محفوظ ہیں۔ ویکسین زیادہ قابل اعتماد تحفظ فراہم کرتی ہیں۔

کیا موجودہ کووڈ- 19 ٹیسٹ اومیکرون ویرینٹ کا پتہ لگاتے ہیں؟

وسیع پیمانے پر استعمال ہونے والے پی سی آر اور اینٹیجن پر مبنی ریپڈ ڈائی گناسٹک ٹیسٹ اومیکرون سمیت کووڈ- 19 کے تمام انفیکشن کا پتہ لگاتے رہتے ہیں۔

آپ اپنے آپ کو اور اپنے خاندان کو اومیکرون ویرینٹ سے کیسے بچا سکتے ہیں؟

سب سے اہم چیز جو آپ کر سکتے ہیں وہ ہے وائرس سے متاثر ہونے کے خطرے کو کم کرنا۔ اپنی اور اپنے پیاروں کی حفاظت کے لیے، یقینی بنائیں کہ

  • ایسا ماسک پہنیں جو آپ کی ناک اور منہ کو ڈھانپے۔ اس بات کو یقینی بنائیں کہ جب آپ ماسک پہنیں اور اتاریں تو آپ کے ہاتھ صاف ہیں۔
  • دوسروں سے کم از کم 1 میٹر کا جسمانی فاصلہ رکھیں۔
  • خراب ہوادار یا ہجوم والی جگہوں سے پرہیز کریں۔
  • گھر کے اندر وینٹیلیشن کو بہتر بنانے کے لیے کھڑکیاں کھولیں۔
  • اپنے ہاتھ باقاعدگی سے دھوئیں۔
  • ویکسین لگائیں۔ ڈبلیو ایچ او سے منظور شدہ کووڈ- 19 ویکسین محفوظ اور موثر ہیں۔

آپ اپنی بچے سے اومیکرون اور کووڈ- 19 کی دیگر اقسام کے بارے میں کیسے بات کر سکتے ہیں؟

 کووڈ -19 کے بارے میں خبریں اور اب اومیکرون ویرینٹ ہماری روزمرہ کی زندگیوں میں سیلاب لا رہا ہے اور یہ فطری ہے کہ متجسس نوجوان بچوں کے سوالات ہوں گے – ان میں سے بہت سے۔ یہ بتانے میں مدد کے لیے ذہن میں رکھنے کے لیے کچھ نکات یہ ہیں کہ سادہ اور یقین دہانی کرنے والے الفاظ میں ایک پیچیدہ موضوع کیا ہو سکتا ہے۔

بچوں کو یہ جاننے کا حق ہے کہ کیا ہو رہا ہے، لیکن اس کی وضاحت انہیں عمر کے لحاظ سے کی جانی چاہیے۔

اپنے بچے کو مدعو کریں کہ اس نے جو کچھ سنا ہے اسے شیئر کریں اور ان کے جوابات سنیں۔ یہ ضروری ہے کہ پوری طرح مصروف رہیں اور ان کے کسی بھی خوف کو سنجیدگی سے لیں۔ صبر کریں، وبائی مرض اور غلط معلومات نے ہر ایک کے لیے بہت زیادہ پریشانی اور غیر یقینی صورتحال پیدا کر دی ہے۔

اس بات کو یقینی بنائیں کہ آپ خود تازہ ترین معلومات سے باخبر ہیں۔ یونیسیف اور ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن جیسی بین الاقوامی تنظیموں کی ویب سائٹس وبائی امراض کے بارے میں معلومات کے بہترین ذرائع ہیں۔

اگر آپ جواب نہیں جانتے تو اندازہ نہ لگائیں۔ جوابات کو ایک ساتھ دریافت کرنے کے موقع کے طور پر استعمال کریں۔

یاد رکھیں کہ بچے اپنے جذباتی اشارے بڑوں سے لیتے ہیں، لہٰذا اگر آپ اپنے چھوٹے کے لیے پریشان ہیں یہ جانتے ہوئے کہ وہ بے چین ہو سکتا ہے، کوشش کریں کہ اپنے خوف کو اپنے بچے کے ساتھ شیئر نہ کریں۔

Omicron variant in Urdu – Video

Omicron Symptoms In Urdu
Disclaimer: The contents of this article are intended to raise awareness about common health issues and should not be viewed as sound medical advice for your specific condition. You should always consult with a licensed medical practitioner prior to following any suggestions outlined in this article or adopting any treatment protocol based on the contents of this article.

Dr. Hira Tanveer
Dr. Hira Tanveer - Author Dr. Hira Tanveer is an MBBS doctor and currently serving at CMH Lahore. Writing is her favorite hobby as she loves to share professional advice on trendy healthcare issues, general well-being, healthy diet, and lifestyle.
Book Appointment with the best "General Physicians"