We have detected Lahore as your city

‏بچوں میں دمے کی علامات اور علاج

Dr. Javed Hayat Khan

5 min read

Find & Book the best "Pulmonologists" near you

دمہ ہوا کی نالیوں میں تنگی سے ہوتا ہے جس کے سبب سانس لینے میں دشواری ہوتی ہے۔ بچوں کے دمے کی وجوہات،علامات، اور بچوں میں دمے کے علاج کے بارے  میں پڑھیں۔

دمہ کیا ہے اور دمہ کی علامات کیا ہیں؟

دمہ  ایک کیفیت کا نام ہے جو آپ کے پھیپھڑوں پر اثر انداز ہوتی ہے۔ دمہ کی سب سے عام علامت سانس سے سیٹی کی آوازں کا نکلنا ،کھانسی ہونا اور سانس لینے میں دشواری پیش آنا ہے، یہ علامیتیں صحت کے کسی اور مسلے کے باعث بھی ہو سکتی ہیں۔ اس لیے پہلی مرتبہ آپکے ڈاکٹر کے لیے اس مرض کی تشخیص تھوڑی مشکل ہو گی، بلخصوص شیر خوار اور بہت چھوٹے بچوں میں۔ دمہ آپ کے بچے کے پھیپھڑے ہمیشہ کے لیے متاثر ہوکر سکتا ہے۔

کن بچوں میں دمہ ہونے کا امکان ہو سکتا ہے؟

  • ایسے بچے جن میں ایکزیمایا الرجی ہو
  • ایسے بچے جن کے خاندان میں کسی کو دمہ کی بیماری ہو
  • ایسے بچے جن کے والدین میں سے کسی کو الرجی کی شکایت  ہو
  • اگر ماں حمل کے دوران سگریٹ نویشی کرے
  • ڈبے کا دودھ پینے والے بچوں میں ماں کا دودھ پینے والوں کی نسبت دمہ کا چانس زیادہ ہوتا ہے

بچوں میں دمہ کا علاج

بچوں میں دمہ کا علاج دو حصول پر مشتمل ہے۔

طویل مدتی کنٹرول کی دوائیں

یہ maintenance medications بھی کہلاتے ہیں۔ یہ ادویات دمے پر مستقل اور طویل مدتی کنٹرول کرنے کے لیے روزانہ کی بنیاد پر بچے کو دی جاتی ہیں۔ اگر بچے کے دمے کی علامات  سال کے کسی مخصوص موسم  میں یہ دوائیاں دی جاتی  ہیں۔ ان میں کورٹیکو سٹیرائیڈ اینہلیر،لیوکوٹرین موڈی فایر، طویل عرصے تک کام کرنے والابیٹ ایگنسٹ،تھیوفیلین، حیاتیاتی دوائی ہے۔ نوکالا، ایک انجیکشن  کے ذریعے  کی جانے والی دوا، ہر چار ہفتوں میں بچوں کو دی جاتی ہے تا کہ شدید دمہ پر قابو پانے میں مدد مل سکے۔

فوری آرام کی دوائیاں

یہ ادویات جنہیں مختصر وقفے کے لیے اثر کرنے والی دوا یا شارٹ ایکٹنگ برونکوڈیلیٹرز کہا جاتا ہے۔ دمہ کی علامات سے  فوری طور پر نجات فراہم کرتی ہیں اور چار سے چھ گھنٹے تک فعال تک رہتی ہیں۔ البوٹیرول، وینٹولین دمہ کے لیے سب سے زیادہ استعمال ہونے شارت ایکٹنگ برونکوڈایلیٹر ہے۔ 

 اگرچه یہ ادویات تیزی کام کرتی ہیں۔ لیکن یہ ادوایات آپکے بچے کے علامات کو واپس آنے سے نہیں روک سکتیں۔ اگر آپ کے بچے میں بار بار یا شدید علامات ہیں، تو اسے طویل مدتی کنڑول کی دواجیسے کورٹیکو سٹیرائیڈ انہیلر لینے کی ضرورت ہو گی۔

اگر آپ کے بچے کو اکثر اور بار بار فوری ریلیف انہیلر استعمال کرنے کی ضرورت ہوتی ہے تو آپ کے بچے کا دمہ قابو میں نہیں ہے۔

علامات پر قابو پانے کے لیے فوریریلیف انہیلر  پر انحصار کرنے سے آپ کے  بچے کو دمه کے شدید دورے کا خطرہ لاحق ہوتا اور یہ اس بات کی علامت ہے کہ آپ کے بچے کو علاج میں تبدیلیاں کرنے کے بارے میں ڈاکٹر سے ملنے  کی  ضرورت ہے۔

دمے کا نیا طریقہ علاج

  • جدید تحقیق سے یہ بھی ظاہر ہوا ہے کہ بچپن میں غذا اور ماحولیاتی عناصر سے الرجی کی شکایت پیدا ہونے والوں کو بالغ  عمر میں دمے میں مبتلا ہونے کا خدشہ زیادہ ہوتا ہے۔ ماہرین کا کہنا کہ دمہ پیدا کرنے والے ماحولیاتی عناصر سے دور رہنے اور دمے کی علامات سے نمٹنے کے بارے میں معلومات کے ذریعے اس بیماری کا مقابلہ کیا جا سکتا ہے۔ 
  • غذا اور ادوایات سے منسلک امریکی سرکاری ادارے فوڈاینڈ ڈرگ ایڈ منسٹریشن منظور کردہ ایک نیا طریقہ علاج Bronchial Thermoplast کہلاتا ہے جس میں تپش کے ذریعے مریض کی ہوا کی نالیوں کو بڑا کیا جا سکتا ہے۔
  • لیکن کچھ ڈاکٹرز کا کہنا ہے اس علاج کی وجہ سے پھییپھڑوں میں سوزش ہوسکتی ہے، اور دمہ مزید شدت بھی اختیار کر سکتا ہے۔ یہ کہتی ہیں کہ علاج ان مریضوں کے لیے نہیں جنہیں دمے کی بہت معمولی شکایت ہو اور صرف ان لوگوں کے لیے استعمال کیا جانا چاہیے جن کے لیے دمے کا کوئی دوسرا طریقہ  علاج موثر ثابت نہیں ہو رہا۔
  • بنیادی سبب ضرورت یہ ہے کہ دمے کا سبب تلاش کریں اور پھر اس سبب سے بچے کے لیے ہر ممکن کوشش کریں معمولی سی توجہ سے سبب تلاش کیا جا سکتا ہے نفسیاتی تنائو سے بچنے کی کوئی کوشش کریں منہ،ناک گلے اور پھیپھڑوں کی بیماریوں کا فوری طور پر علاج کرائیں اگر آپ کو کوئی دل کی بیماری ہو تو دمے کے متعلق داکٹر سے مشورہ کریں۔
  • ایفڈرین Ephedrine ایمانو فاعلن Aminophylline یا میتھیڈرین Methdrine  کی گولیاں استعمال کریں۔ پہلے ایک گولی کھا کے دیکھیں اگر بلکل افاقه نہ ہو تو تقریبا 15 مینٹ بعد ایک گولی استعمال کی جا سکتی ہے۔ 
  • بعض اوقات دمے کے مریض کو اتنی تکلیف ہوتی ہے کہ اس کے لیے دو قدم چلنا ہی مشکل ہو جاتا ہے۔
  • دمے کی ایک مریضہ کہتی ہیں کہ مجھے سانس لینے میں دشواری ہوتی ہے۔ جب میں سیڑھیاں چڑھ کر اپنے کمرے میں آتی  ہوں تو مجھے اپنے ڈریسر کچھ ٹیک لگا کر آرام کرنا پڑتا ہے۔
  • دمے کے مریضوں کو عمر بھر کھانسی ، سانس لینے میں دشواری چھاتی میں تکلیف جیسی علامات کا مقابلہ کرنا پڑتا ہے۔ بچوں ،خواتین اور سیاہ فام امریکی مردوں میں میں دمے کی شرح زیادہ ہے۔ بچوں کے گروپوں میں سیاہ فام امریکی  بچوں کو دمے کی سب سے زیادہ شکایت ہوتی ہے۔اس گروپ میں تقریبا 17 فی صد بچوں کو دمے کی شکایت ہو سکتی ہے، جو بچوں کے کسی بھی دوسرے گروپ سے زیادہ ہے۔
  • عالمی ادارہ صحت کے مطابق دنیا بھر میں تقریبا تئیس کروڑ پچاس لاکھ افراد کو یہ شکایت ہے۔ فضائی آلودگی میںکمی اور تما بکو نوشی اور فضائی آلودگی کے اثرات کے بارے میں تعلیمی مہمات کے باوجود امریکہ میں ہر بارہ افراد میں سے ایک دمے کا مریض ہے۔
  • لومینال Luminal یا ایمی ٹال Amitol کی گولیاں بھی دمے کے لیے بہت موثر ہوتی ہیں اگر دوبارہ ذیادہ شدید ہو اور ان گولیوں سے افاقه نہ ہو تو فوری آرام پانے کے لیے قریبی ڈاکٹر یا ہسپتال سے ایمانو اور گلوز Glucose کا ٹیکہ بھی لگو ایا جا سکتا ہے ایفر یلیکس سیرپ Ephrelex  کا ایک چمچہ دمے کا تیر ہدف علاج ہے۔
  • دمے کے علاج کے لیے سب سے زیادہ دو چیزیں استعمال ہوتی ہیں۔ ایک میٹرڈ ڈوذ ان هیلر اور دوسرے  پائوڈر ان هیلر، ان دوائوں میں امید افزا بات یہ ہے کہ ان کے مضر اثرات نہیں ہوتے، اس لیے کہ ان ہیلر دمہ کا پمپ سے دی جانے والی ادوایہ کی بہت کم مقدار خون میں شامل ہوتی ہے، سانس کی نالی جس جگہ خراب ہوتی یہ دوائیں اسی جگہ اثر انداز ہوتی ہیں، ان هیلر سانس کی نالیوں کو مزید خراب ہونے سے روکتا ہے۔
  • اگر ان هیلر بند کردی جائے اور فوری طور پر آرام کے لیے گولی و انجیکشن کا استعماک بار بار کیا جائے ، جسے اسٹرائیڈ کہا جاتا ہے تو ذہن نشین رے کہ یہ ادویہ خون میں شامل ہو کر مزید نقصان کا سبب بنتی ہیں، جیسے ہڈیوں کا کمزور ہونا، دیگر اعضائےجسمانی کا متاثر ہونا وغیرہ شامل ہیں۔

دمے کا علاج چند گھریلو نسخوں سے

ادرک اور سبز دھنیا 

ادرک اور سبز دھنیا ہم وزن کا لے لیں پھر اس میں دیسی گھی اور کالی مرچ ڈال کر اسکا سالن بنا لیں اور اسے ہفتے میں دمے کے علاج میں کافی حد تک مفید ہو سکتا ہے۔

 دمے کا علاج انجیر سے

پانچ عدد انجیر کو آدھا کلو پانی میں ابال لیں۔ جب پانی ایک کپ رہ جائے تو انجیر کھا لر وہ پانی پی لیں۔ دس پندرہ دن تک مسلسل استعمال سے بلغم اور دمہ کا مکمل خآتمہ ہو جائے گا۔

سفوف سے دمے کا علاج

آدھا کلو کریلے لے کر اس کو بمعہ بیج اور چھلکا کاٹ کر خشک کر لیں پھر سفوف بنا لیں۔ کھانا کھاتے وقت جو بھی گھر میں سالن پکا ہو اپنی کھانے والی پلیٹ میں ایک بڑی چٹکی کریلے کا سفوف ڈال کر روٹی کے ساتھ کھائیں۔  اس سفوف میں اور کوئی چیز شامل نہ کریں۔

بیکنگ سوڈا اور شہد کا مشروب 

یہ بھی ایک موثر گھریلو ٹوٹکا ہے، اس کے لیے ایک چائے کا چمچ شہد، آدھا چائے کا چمچ بیکنگ سوڈا، دو سے تین قطرے لیموں کے عرق اور ایک گلاس پانی کی ضرورت ہوگی، ان تمام اجزاء کو پانی میں مکس کریں اور اسے پی لیں۔

نسخہ الشفاء

لونگ 10 گرام ،فلفل سیاه 10 گرام، بہڑہ 10 گرام، کتھ سرخ 30 گرام، جوشانده پوست کوکنار کو لیں پھر جوشاندہ کا کنار میں تمام ادویہ ڈال کر کالے  چنے کے برابر گولیاں بنا لیں پھر ان گولیوں کو ایک ایک صبح، دوپہر، شام ،رات ایک ایک گولی منہ میں رکھ کر چوسیں پندرہ دن تک مسلسل با قاعدگی کے ساتھ استعمال کریں۔

Disclaimer: The contents of this article are intended to raise awareness about common health issues and should not be viewed as sound medical advice for your specific condition. You should always consult with a licensed medical practitioner prior to following any suggestions outlined in this article or adopting any treatment protocol based on the contents of this article.

Dr. Javed Hayat Khan - Author Dr. Javed Hayat Khan is a Pulmonologist practicing in Lahore. Dr. Javed Hayat Khan has the following degrees: MBBS, FRCP (London), MRCP (UK), FCCP , Diploma in Thoracic Medicine (London), FRCP (Glasgow) and has 38 years of experience. You can book an appointment with Dr. Javed Hayat Khan by calling us or using the 'Book Appointment' button.
Book Appointment with the best "Pulmonologists"