We have detected Lahore as your city

ڈپریشن کے نشانات, علامات اورعلاج

Assoc. Prof. Dr. Ayesha Rasheed

4 min read

Find & Book the best "Psychiatrists" near you

 ڈپریشن ایک ایسی کیفیت کا نام ہے جو انسان کے آج پر اثر انداز ہو کر اسکے آنے والے کل کی خوشیوں کو نگل جاتی ہے ۔

کا شکار ہے اس کو معلوم ہے ک یہ ایک چھوٹا سا لفظ (Depression) لیکن حقیقت میں جو شخص ڈپریشن

اصل میں کتنا وزن دار ہے۔ ڈپریشن انسان کو زندگی کے ایک ایسے موڑ پر لے جاتا ہے جہاں اس کو خود یاد نہیں رہتا کہ اصل میں اس کیفیت کی وجہ کیا تھی۔

 یہ اندر ہی اندر انسان کو دیمک کی طرح کھاتا جاتا ہے ۔ بظاھر وہ انسان ایک عمارت کی طرح کھڑا ہوتا ہے مگر حقیقت میں یہ عمارت كهوكهلی ہوتی ہے ۔ اور دیمک لگی ہر چیز کی طرح ، ایک دن ایسا آتا ہے جب یہ كهوكهلی عمارت گر جاتی ہے ۔ انسان ٹوٹ جاتا ہے ۔ ہر طرف اندھیرا چھا جاتا ہے ۔ مایوسی کی گھٹا میں ایک کالے بادل کی مانند ۔

ڈپریشن کیا ہے؟

ڈپریشن ایک ایسی کیفیت ہے جس میں سب کچھ مشکل معلوم ہوتا ہے ۔ ایسے جیسے ہر وہ چیز جو کبھی خوشی کا باعث تھی اب خوشی نہ دیتی ہو ۔ جیسے زندگی کے سارے رنگ پھیکے پر جایئں۔ انسان سوچنے پر مجبور ہو جائے کہ کیا وہ کبھی خوش بھی تھا ؟

نہ صبح اٹھنے کا من کرے اور نہ رات کو سونے کا ۔ جیسے ایک گہرا سمندر ہو اور انسان اس کے اندھیروں میں ڈوبتا چلا جائے ۔ گہرا ۔ اور گہرا ۔ اور پھر اتنی گہرائی کہ بس چاروں طرف گھپ اندھیرا ۔ 

ڈپریشن شروع میں ایک رد عمل کی طرح ہے ۔ اس زندگی کا رد عمل جو ہمارے ہاتھ میں نہ کبھی تھی اور نہ کبھی ہوگی ۔ ان پریشانیوں کا رد عمل جن کو ختم کرنا انسان کے لئے ناممکن محسوس ہوتا ہے. درحقیقت یہ ہر اس چیز کا انکار ہے جسے ہماری آنکھیں دیکھتی ہیں

:ڈپریشن کے نشانات و علامات

ڈپریشن کی علامات میں شامل ہوسکتے ہیں۔

افسردہ مزاج –

 لطف اندوز ہونے والی سرگرمیوں میں دلچسپی کم ہونا یا –
اس طرح کی خوشی محسوس نہ ہونا جیسی پہلے ہوا کرتی تھی

جنسی خواہش میں کمی –

بھوک میں تبدیلی –

غیر ارادی وزن میں کمی یا زیادتی –

بہت زیادہ یا بہت کم سو جانا –

اشتعال انگیزی ، اور بےچینی –

سست تحریک اور تقریر –

تھکاوٹ یا توانائی کا کم ہونا –

بے وقعت یا جرم کا احساس –

سوچنے ، دھیان دینے ، یا فیصلے کرنے میں دشواری –

موت یا خودکشی  کی کوشش کے بار بار خیالات –

:عورتوں میں ڈپریشن

بیماریوں کے کنٹرول اور روک تھام کے مراکز (سی ڈی سی) کے مطابق ، مردوں کے مقابلے میں خواتین میں افسردگی کا تناسب تقریبا دو گنا عام ہے۔

ذیل میں ڈپریشن کی کچھ علامتیں ہیں جو خواتین میں اکثر دکھائی دیتی ہیں۔

چڑچڑاپن –

اضطراب –

موڈ کا بار بار بدلنا –

تھکاوٹ –

 منفی خیالات پر روشنی ڈالنا –

:نیز ، کچھ قسم کا ڈپریشن خواتین میں بھی انوکھا ہوتا ہے ، جیسے

پوسٹ پارٹم ڈیپریشن –

پری مینسٹروول ڈسفورک ڈسآرڈر –

:مردوں میں ڈپریشن

امریکن سائیکولوجیکل ایسوسی ایشن کے مطابق ، ریاستہائے متحدہ میں تقریبا 9 9٪ مرد افسردگی یا اضطراب کا احساس رکھتے ہیں۔

ڈپریشن کے شکار مرد خواتین سے زیادہ شراب پینے ، غصہ ظاہر کرنے اور رسک لینے میں مشغول ہونے کا زیادہ امکان رکھتے ہیں۔

:مردوں میں افسردگی کی دیگر علامات میں یہ شامل ہوسکتے ہیں

خاندانوں اور معاشرتی حالات سے گریز کرنا –

بغیر وقفے کے کام کرنا –

کام اور خاندانی ذمہ داریوں کو برقرار رکھنے میں دشواری کا سامنا کرنا –

تعلقات میں بدسلوکی یا قابو پانے کا رویے رکھنا –

:کالج و یونیورسٹی کے طالب علموں میں ڈپریشن

کالج میں وقت دبائو کا شکار ہوسکتا ہے ،اس میں شخص پہلی بار دوسرے طرز زندگی ، ثقافتوں اور تجربات سے پہلی بار نمٹ رہا ہوتا ہے۔

کچھ طلباء کو ان تبدیلیوں کا مقابلہ کرنے میں دشواری کا سامنا کرنا پڑتا ہے ، اور اس کے نتیجے میں وہ ڈپریشن ، اضطراب یا دونوں کو پیدا کرسکتے ہیں۔

کالج کے طلباء میں ڈپریشن کی علامات شامل ہوسکتی ہیں۔

اسکول کے کام پر توجہ دینے میں دشواری –

نیند نہ آنا –

بہت زیادہ سونا –

بھوک میں کمی یا اضافہ –

ان معاشرتی حالات اور سرگرمیوں سے گریز جس سے وہ لطف اندوز ہوتے تھے –

:نو عمر میں ڈپریشن

جسمانی تبدیلیاں ، ہم مرتبہ کے دباؤ اور دیگر عوامل نوعمروں میں ڈپریشن کا باعث بن سکتے ہیں۔

وہ مندرجہ ذیل علامات میں سے کچھ کا تجربہ کرسکتے ہیں۔

دوستوں اور رشتہ داروں سے کنارہ کشی کرنا –

اسکول کے کام پر توجہ دینے میں دشواری –

مجرم ، لاچار ، یا بیکار محسوس کرنا –

بےچینی ، جیسے خاموش بیٹھنے سے قاصر ہونا

ڈپریشن ک یہ تمام مذکورہ بالا حالتوں پر قابو پایا جاسکتا ہے ۔ جب بھی ڈپریشن کی ابتدائ کیفیات نمودار ہوں آپ اپنے آپ کو مصروف کر لیں۔ چہل قدمی کا اہتمام کریں، عبادت کریں،منفی سوچوں کو زہن میں جگہ نہ دیں۔ زیادہ سے زیادہ خوش رہنے کی کوشش کریں آپ کے اردگر لوگوں میں کوئ نہ کوئ ایک شخص ایسا ہوتا ہے جس سے آپ اپنے دل و دماؑغ کی کیفیت بیان کر سکتے ہیں جو آپ کو سمجھ سکتا ہے ایسے کسی بھی شخص کیساتھ ہمیشہ رابطے میں رہیں تاکہ آپ زندگی میں اپنی کھوئ ہوئ امید واپس حاصل کر سکیں اس کے علاوہ وقت کو بھی مہلت دیں کہ وہ آپ کو اس کیفیت سے نکال سکے یعنی صبر کا مظاہرہ کریں اور اپنے اندر ہمت پیدا کریں ۔

کیونکہ ہر چیز کو واقع ہونے میں میں بھلے وقت نہ لگتا ہو لیکن ختم ہونے میں وقت لگتا ہے انسان کی اپنی انفرادی قوت اور ارادہ بھی اس بیماری پر قابو پانے پر اثر انداز ہوتی ہے ۔ اور اس بات کو ذہن نشین رکھنا چاہیئے کہڈپریشن زندگی کا حصہ ہے ۔ زندگی صرف دھوپ ہی دھوپ نہیں۔ نہ چھاوں ہی چھاوں ہے۔ بلکہ یہ دھوپ اور چھاوں کا ملا جلا سفر ہے ۔ اسلیئے ڈپریشن کو اپنے اوپر طاری نہ ہونے دیں اور نہ ہی اسے اپنے اندر جگہ بنا کر بیٹھنے کی اجازت دیں ۔ مخالفت اور تردید زندگی کا حصہ ہیں ان کا سامنا کرنے سے نہ گھبرائیں.

ان سب باتوں کا خیال رکھ کر انسان ڈپریشن جیسی بیماری پر قابو پا سکتا ہے ۔ لیکن اگر وہ ایسا نہیں کرتا تو پھر ڈپریشن کسی آکٹوپس کی طرح اس کی ذات کو اپنے شکنجے میں جکڑ لیتا ہے اور پھر باہر نہیں نکلنے دیتا۔

:ڈپریشن کا علاج اور اس کی تشخیص

اگر کسی شخص کو شبہ ہے کہ ان میں ڈپریشن کی علامات ہیں تو ، انہیں ڈاکٹر یا دماغی صحت سے متعلق ماہر سے پیشہ ورانہ مدد لینا چاہئے۔

ایک صحت مند پیشہ ور فرد مختلف وجوہات کو مسترد کر سکتا ہے ، صحیح تشخیص کو یقینی بنا سکتا ہے ، اور محفوظ اور موثر علاج مہیا کرسکتا ہے۔

وہ علامات کے بارے میں سوالات پوچھیں گے ، جیسے کہ وہ کتنے عرصے سے موجود ہیں۔ جسمانی وجوہات کی جانچ کرنے اور صحت کی دیگر حالتوں کو مسترد کرنے کے لئے ڈاکٹر خون کے ٹیسٹ کا  معائنہ کروا سکتا ہے۔

:آن لائن تھراپی ڈپریشن میں مدد کر سکتی ہے

اولاڈاک کے لائسنس یافتہ معالجین کی مدد سے اپنے معیار زندگی کو بہتر بنائیں۔ فون یا ویڈیو سیشن کے دوران ایک معالج سے بات کریں ۔

اولا ڈاک کی مدد سے کسی بھی ڈاکٹر کے ساتھ اب آپ کی اپائینٹمنٹ صرف ایک کلک کی دوری پر ہے۔ آپ یہاں کلک کرکے گھر بیٹھے ہی اپنے موبائل سے ایک ورچوئل یا ان-آفس اپائینٹمنٹ بک کروا سکتے ہیں۔ آپ اپنی اپائینٹمنٹ بک کروانے کے لئے صبح 9 بجے سے 11 بجے تک  اہلاڈاک کی ہیلپ لائن 04238900939 پر بھی کال کرسکتے ہیں۔

Disclaimer: The contents of this article are intended to raise awareness about common health issues and should not be viewed as sound medical advice for your specific condition. You should always consult with a licensed medical practitioner prior to following any suggestions outlined in this article or adopting any treatment protocol based on the contents of this article.

Assoc. Prof. Dr. Ayesha Rasheed - Author Assoc. Prof. Dr. Ayesha Rasheed is a psychiatrist currently practicing at Union Hospital Johar Town, Lahore. You can book an appointment with her using oladoc.com or by calling our helpline 04238900939
Book Appointment with the best "Psychiatrists"