We have detected Lahore as your city

چاکلیٹ کے فوائد اور نقصانات – کیا یہ صحت کے لیے اچھی ہے؟

Dr. Mehak Zafar

4 min read

Find & Book the best "Nutritionists" near you

چاکلیٹ بچوں، نوجوانوں اور بڑوں میں یکساں  بہت مقبول میٹھا ہے۔ چاکلیٹ خاص طور پر بچوں میں بہت مقبول ہیں۔ چاکلیٹ آئس کریم، کیک، پیسٹری، پڈنگ اور کینڈی میں موجود پائی جاتی ہے۔ یہ کوکو کی پھلیاں، چینی اور دودھ کے بیجوں سے بنتی ہے۔

چاکلیٹ صحت کے لیے اچھی ہے یا نہیں؟ جواب جاننے کے لیے اس مضمون کو آخر تک پڑھیں۔ تو آئیے اب چاکلیٹ کے کچھ فوائد اور نقصانات پر بات کرتے ہیں۔

چاکلیٹ کے فوائد

:چاکلیٹ کے کچھ فوائد نیچے تفصیل سے بیان کیے گئے ہیں

۔1 چاکلیٹ توانائی بخشتی ہے

اگر آپ کافی کم مقدار میں پینے کی کوشش کر رہے ہیں لیکن اپنی کیفین کے بغیر دن بھر گزرنے کے لیے جدوجہد  بھی کر رہے ہیں تو ڈارک چاکلیٹ اس  کا ایک بہترین جواب ہو سکتا ہے۔ کیونکہ اس کے ہر 100 گرام میں 43 ملی گرام کیفین ہوتی ہے۔ ڈارک چاکلیٹ کی خون کے بہاؤ کو بہتر بنانے کی صلاحیت کی بدولت اور اس کے نتیجے میں پٹھوں تک آکسیجن کو تیز رفتار سے لے جا سکتی ہے۔ 

۔2 چاکلیٹ خون کے جمنے کو روک سکتی ہے

چاکلیٹ پولیفینول خون کے بہاؤ کو بڑھا سکتی ہے۔ آپ کی خون کی نالیوں کو چوڑا کرنے اور خون کے بہاؤ کو بڑھانے سے یہ آپ کے خون کے جمنے کے خطرے کو کم کرنے میں مدد کر سکتی ہے۔

۔3 چاکلیٹ آپ کی دماغی صحت کے لیے اچھی ہے

جب آپ اسے کھاتے ہیں تو آپ کو مسکراہٹ دینے کے علاوہ، چاکلیٹ دماغ پر بھی مثبت اثرات مرتب کرتی ہے۔ چاکلیٹ محسوس کرنے والے ہارمون سیروٹونن اور ڈوپامائن کو منظم کرنے میں مدد کرتی ہے اور موڈ کو بھی بہتر بنانے میں  مدد کر سکتی ہے۔ محققین نے کوکو کو بہتر توجہ، پروسیسنگ کی رفتار اور یادداشت سے جوڑ دیا ہے۔ دوسری طرف سائنس کہتی ہے کہ یہ آپ کے ادراک کو اعلیٰ شکل میں رکھ سکتی ہے۔

۔4 چاکلیٹ آپ کو خوش مزاج  بنا سکتی ہے

سائنس اس بات پر متفق ہے کہ چاکلیٹ آپ کو خوش کرتی ہے اور صرف اس لیے نہیں کہ اس کا ذائقہ کافی حیرت انگیز ہے بلکہ چاکلیٹ کے اندر ایسے کیمیائی اجزا ہوتے ہیں جو اسے ناقابلِ مزاحمت بناتے ہیں۔ یہ ایک نامیاتی مرکب جو جسم میں خارج ہونے پر محبت میں پڑنے کے احساس کو ابھارتا ہے۔

دماغ میں قدرتی طور پر موجود ڈوپامائن کے ساتھ مل کر یہ اینٹی ڈپریسنٹ کے طور پر بھی کام کرتا ہے۔ اس کے تھیوبرومین اور ٹرپٹوفن مواد کے ساتھ چاکلیٹ کی دیگر خصوصیات جو خوشی کو فروغ دیتی ہیں اور ایک قدرتی حوصلہ افزائی کرتی ہیں اس کی بنا پر یہ دیکھنا اور اس بات کو سمجھنا آسان ہے کہ چاکلیٹ کو ایک مصدقہ موڈ بوسٹر کیوں سمجھا جاتا ہے۔

۔5 چاکلیٹ دل کی بیماری اور فالج کے خطرے کو کم کر سکتی ہے

 ایک مطالعہ کے شرکاء  بتایا گیا ہے کہ جن لوگوں نے ڈارک چاکلیٹ کو استعمال کیا ان میں دل کی بیماری کا خطرہ کم  دیکھا  گیا ہے۔ چاکلیٹ کو  شریانوں میں کیلسیفائیڈ پلاک کی روک تھام کے کیے فائدہ مند سمجھا جاتا ہے۔ کوکو اس سے بھی زیادہ فائدہ مند ثابت ہو سکتا ہے اور ڈارک چاکلیٹ سے زیادہ کوکو پر مشتمل کھانے پر زور دیا گیا ہے۔ لہذا، اگر آپ ڈارک چاکلیٹ کے پرستار نہیں ہیں تو فلاوانولز کے ساتھ کھانے کی کوشش کریں جیسے سیب اور سبز چائے وغیرہ کے ساتھ کھانا مفید ثابت ہو سکتا ہے۔

۔6 چاکلیٹ آپ کی جلد کی حفاظت کر سکتی ہے

اگرچہ 2014 کا مطالعہ ان نتائج کو دہرانے کے قابل نہیں تھا مگر 2006 میں کی گئی ایک تحقیق سے پتہ چلتا ہے کہ ڈارک چاکلیٹ میں موجود فلیوونائڈز UV روشنی کو جذب کرنے، جلد میں خون کے بہاؤ کو بڑھانے، جلد کی ساخت کو بہتر بنانے اور جلد کی ہائیڈریشن کو بڑھانے میں مدد کرتے ہیں۔

ڈارک چاکلیٹ فلاوانولز سے بھرپور ہوتی ہے جو سوزش اور آکسیڈیٹیو تناؤ سے لڑتے ہیں یہ بتاتے ہیں کہ وہ زیادہ صحت مند جلد کو فروغ دینے میں کیوں مددگار ثابت ہو سکتے ہیں۔ اگرچہ تحقیق سے پتہ چلتا ہے کہ فلاوانول سے بھرپور چاکلیٹ کا باقاعدگی سے روشنی سے بچانے میں مدد دے سکتا ہے۔ 

 چاکلیٹ کے نقصانات

:چاکلیٹ کے کچھ نقصانات نیچے تفصیل سے بیان کیے گئے ہیں

 ۔1 چاکلیٹ میں  وٹامنز اور منرلز کی کمی ہوتی ہے

چاکلیٹ آپ کی صحت پر نقصان دہ اثر ڈال سکتی ہے اگر آپ اسے صحت بخش ناشتے کے بجائے کھاتے ہیں کیونکہ اس کے چند مفید غذائی اجزاء ہیں جو کھانے میں نقصان نہیں پہنچاتے مگر کچھ ایسے اجزا بھی ہیں جو نقصان سے بھرپور ہیں۔ چاکلیٹ وٹامنز کا ایک اہم ذریعہ نہیں ہے اور کیلشیم کی روزانہ تجویز کردہ مقدار کا صرف 8 فیصد اور آئرن کی روزانہ تجویز کردہ مقدار کا 2 فیصد فراہم کرتی ہے۔

 ۔2 زیادہ چاکلیٹ کھانا موٹاپے کا باعث بن سکتا ہے

چاکلیٹ میں چربی کی نسبتاً زیادہ مقدار بھی ہوتی ہے۔ ڈارک چاکلیٹ میں فی اونس 12 گرام چکنائی ہوتی ہے جس میں 7 گرام غیر صحت بخش سیچوریٹڈ چربی شامل ہوتی ہے۔ اگر آپ روزانہ 2,000 کیلوریز استعمال کرتے ہیں تو یہ مقدار چربی کی یومیہ قیمت کا 7 فیصد اور سیر شدہ چربی کے لیے ڈارک چاکلیٹ کا 35 فیصد شامل  ہے۔

دودھ کی چاکلیٹ میں فی اونس 9 گرام چربی ہوتی ہے جس میں 5 گرام سنترپت چربی بھی شامل ہوتی ہے۔ اس میں پائی جانے والی چربی میں پروٹین یا کاربوہائیڈریٹس کے مقابلے فی گرام زیادہ کیلوریز ہوتی ہے لہٰذا اگر آپ بہت زیادہ چکنائی والے کھانے یا چاکلیٹ کھاتے ہیں تو آپ کو اپنی روزانہ کیلوریز کی حد میں رہنے میں دشواری کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔ مزید برآں زیادہ سیر شدہ چکنائی کا استعمال آپ کو ٹائپ 2 ذیابیطس اور دل کی بیماری کا خطرہ بڑھا سکتی  ہے۔

 ۔3 چاکلیٹ میں زیادہ مقدار میں کیلوریز ہوتی ہیں

چاکلیٹ نسبتاً توانائی کی کثافت ہے مطلب یہ ہے کہ اس کی صرف ایک چھوٹی سی مقدار بڑی تعداد میں کیلوریز فراہم کرتی ہے۔ ایک اونس ڈارک چاکلیٹ میں 170 کیلوریز ہوتی ہیں اور دودھ کی چاکلیٹ کے ایک اونس میں 153 کیلوریز ہوتی ہیں۔ ایک اونس چاکلیٹ چپس کے 2 کھانے کے چمچوں سے تھوڑا سا زیادہ ہوتی ہے۔

ایک باقاعدہ سائز کے چاکلیٹ بار کا تقریباً دو تہائی یا ایک بڑی بار کا ایک تہائی مقدار میں زیادہ ہو سکتا ہے لہذا آپ کو معلوم ہوگا  کہ آپ آسانی سے ایک سے زیادہ چاکلیٹ کا استعمال کر سکتے ہیں اور کھا سکتے ہیں۔ آپ کے ارادے سے زیادہ کیلوری کی مقدار اس میں موجود ہو سکتی ہے۔ 

 ۔4 چاکلیٹ میں شوگر کی مقدار زیادہ پائی جاتی ہے

شوگر بغیر کسی ضروری غذائی اجزا کے کیلوریز فراهم کرتی ہے۔ امریکن ہارٹ ایسوسی ایشن کے مطابق خواتین کو روزانہ 25 گرام سے زیادہ اور مردوں کو 38 گرام سے زیادہ چینی نہیں کھانی چاہیے۔

ڈارک چاکلیٹ کے ہر اونس میں 6.8 گرام شوگر ہوتی ہے اور دودھ کی چاکلیٹ کا ایک اونس 15 گرام شوگر فراہم کرتا ہے۔

۔5 چاکلیٹ دانتوں کی صحت کے لیے نقصان دہ ہوسکتی ہے

چاکلیٹ کی کچھ اقسام میں شوگر کی مقدار زیادہ ہوتی ہے۔ اس لیے دیگر میٹھی چیزوں کی طرح زیادہ چاکلیٹ کھانا بھی آپ کے دانتوں کو نقصان پہنچا سکتا ہے۔۔ اس سے دانتوں کی خرابی، دانتوں میں درد، دانتوں میں کیڑے لگنا جیسے مسائل پیدا ہو سکتے ہیں۔اس لیے آپ کو چاکلیٹ اعتدال سے کھائیں اور بعد میں اپنے دانتوں کو برش کرنا نہ بھولیں۔

Disclaimer: The contents of this article are intended to raise awareness about common health issues and should not be viewed as sound medical advice for your specific condition. You should always consult with a licensed medical practitioner prior to following any suggestions outlined in this article or adopting any treatment protocol based on the contents of this article.

Dr. Mehak Zafar - Author Dr. Mehak Zafar is a Dietitian with 4 years of experience. You can book a consultation with Dr. Mehak Zafar through oladoc.com or by calling at 04238900939.
Book Appointment with the best "Nutritionists"